Bazm-e-Anjum- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بزم انجم

Bazm-e-Anjum- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بزم انجم

بزم انجم

Bazm-e-Anjum

 

سورج نے جاتے جاتے شام سيہ قبا کو
طشت افق سے لے کر لالے کے پھول مارے

Suraj Ne Jate Jate Shaam-e-Seh Qaba Ko
Tasht-e-Ufaq Se Le Kar Lale Ke Phool Mare

 

پہنا ديا شفق نے سونے کا سارا زيور
قدرت نے اپنے گہنے چاندی کے سب اتارے

Pehna Diya Shafaq Ne Sone Ka Sara Zaiwar
Qudrat Ne Apne Gehne Chandi Ke Sub Utare

 

محمل ميں خامشی کے ليلائے ظلمت آئی
چمکے عروس شب کے موتی وہ پيارے پيارے

Mehmil Mein Khamshi Ke Lela’ay Zulmat Ayi
Chamke Aroos-E-Shab Ke Moti Vo Pyare Pyare

 

وہ دور رہنے والے ہنگامۂ جہاں سے
کہتا ہے جن کو انساں اپنی زباں ميں تارے

Vo Door Rehne Wale Hungama’ay Jahan Se
Kehta Hai Jin Ko Insan Apni Zuban Mein Taray

 

محو فلک فروزی تھی انجمن فلک کی
عرش بريں سے آئی آواز اک ملک کی

Mehv-e-Falak Ferozi Thi Anjuman Falak Ki
Arsh-e-Bareen Se Ayi Awaz Ek Malak Ki

 

اے شب کے پاسانو، اے آسماں کے تارو!
تابندہ قوم ساری گردوں نشيں تمھاری

Ae Shab Ke Pasbano, Ae Asman Ke Taro !
Tabinda Qaum Sari Gurdoon Nasheen Tumhari

 

چھيڑو سرود ايسا ، جاگ اٹھيں سونے والے
رہبر ہے قافلوں کی تاب جبيں تمھاری

Chairo Sarood Aesa, Jaag Uthain Sone Wale
Rahbar Hai Qaflon Ki Tab-e-Jabeen Tumhari

 

آئينے قسمتوں کے تم کو يہ جانتے ہيں
شايد سنيں صدائيں اہل زميں تمھاری

Aynay Qismaton Ke Tum Ko Ye Jante Hain
Shaid Sunain Sadaeyn Ahl-e-Zameen Tumhari

 

رخصت ہوئی خموشی تاروں بھری فضا سے
وسعت تھی آسماں کی معمور اس نوا سے

Rukhsat Huwi Khamoshi Taron Bhari Faza Se
Wusa’at Thi Asman Ki Ma’amoor Iss Nawa Se

 

حسن ازل ہے پيدا تاروں کی دلبری ميں
جس طرح عکس گل ہو شبنم کے آرسی ميں

Husn Azal Se Paida Taron Ki Dilbari Mein
Jis Tarah Aks-e-Gul Ho Shabnam Ki Arsi Mein

 

آئين نو سے ڈرنا ، طرز کہن پہ اڑنا
منزل يہی کھٹن ہے قوموں کی زندگی ميں

Aayen-e-Nau Se Darna, Tarz-e-Kuhan Pe Urna
Manzil Yehi Kathan Hai Qoumon Ki Zindagi Mein

 

يہ کاروان ہستی ہے تيز گام ايسا
قوميں کچل گئی ہيں جس کی رواروی ميں

Ye Karwan-e-Hasti Hai Taez Gaam Aesa
Qoumain Kuchal Gayi Hain Jis Ki Rawarawi Mein

 

آنکھوں سے ہيں ہماری غائب ہزاروں انجم
داخل ہيں وہ بھی ليکن اپنی برادری ميں

Aankhon Se Hain Humari Ghayeb Hazon Anjum
Dakhil Hain Vo Bhi Lekin Apni Baradari Mein

 

اک عمر ميں نہ سمجھے اس کو زمين والے
جو بات پا گئے ہم تھوڑی سی زندگی ميں

Ek Umer Mein Na Samjhe Iss Ko Zameen Wale
Jo Baat Pa Gaye Hum Thori Si Zindagi Mein

 

ہيں جذب باہمی سے قائم نظام سارے
پوشيدہ ہے يہ نکتہ تاروں کی زندگی ميں

Hain Jazb-e-Bahmi Se Qaim Nazam Sare
Posida Hai Ye Nukta Taron Ki Zindagi Mein

 

 

Raat Aur Shayar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | رات اور شاعر

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *