Chand- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | چاند

Chand- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | چاند

چاند

Chand

 

 

اے چاند! حسن تيرا فطرت کی آبرو ہے
طوف حريم خاکی تيری قديم خو ہے

Ae Chand! Husn Tera Fitrat Ki Aabru Hai
Tof-e-Hareem-e-Khaki Teri Qadeem Khu Hai

 

يہ داغ سا جو تيرے سينے ميں ہے نماياں
عاشق ہے تو کسی کا، يہ داغ آرزو ہے؟

Ye Dagh Sa Jo Tere Seene Mein Hai Namayan
Ashiq Hai Tu Kisi Ka, Ye Dagh-e-Arzu Hai?

 

ميں مضطرب زميں پر، بے تاب تو فلک پر
تجھ کو بھی جستجو ہے ، مجھ کو بھی جستجو ہے

Mein Mutarib Zameen Par, Betab Tu Falak Par
Tujh Ko Bhi Justujoo Hai, Mujh Ko Bhi Justujoo Hai

 

انساں ہے شمع جس کی ، محفل وہی ہے تيری؟
ميں جس طرف رواں ہوں ، منزل وہی ہے تيری؟

Insan Hai Shama Jis Ki, Mehfil Wohi Hai Teri?
Main Jis Taraf Rawan Hun, Manzil Wohi Hai Teri?

 

تو ڈھونڈتا ہے جس کو تاروں کی خامشی ميں
پوشيدہ ہے وہ شايد غوغائے زندگی ميں

Tu Dhoondta Hai Jis Ko Taron Ki Khamashi Mein
Poshida Hai Woh Shaid Ghoghaye Zindagi Mein

 

استادہ سرو ميں ہے ، سبزے ميں سو رہا ہے
بلبل ميں نغمہ زن ہے ، خاموش ہے کلی ميں

Istada Saru Mein Hai, Sabze Mein So Raha Hai
Bulbul Mein Naghma-Zan Hai, Khamosh Hai Kali Mein

 

آ ! ميں تجھے دکھاؤں رخسار روشن اس کا
نہروں کے آئنے ميں شبنم کی آرسی ميں

Aa ! Mein Tujhe Dikhaon Rukhsar-e-Roshan Uss Ka
Nehron Ke Aaeene Mein, Shabnam Ki Aarasi Mein

 

صحرا و دشت و در ميں ، کہسار ميں وہی ہے
انساں کے دل ميں ، تيرے رخسار ميں وہی ہے

Sehra-o-Dasht-o-Dar Mein, Kuhsar Mein Wohi Hai
Insan Ke Dil Mein, Tere Rukhsar Mein Wohi Hai

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *