Dirgargoon Hai, Jahan, Taaron Ki Garzish Taiz Hai Saqi - Iqbal

Dirgargoon Hai, Jahan, Taaron Ki Garzish Taiz Hai Saqi – Iqbal

Dirgargoon Hai, Jahan, Taaron Ki Garzish Taiz Hai Saqi

Allama Iqbal Poetry (Bal-e-Jibril)

Dirgargoon Hai, Jahan, Taaron Ki Garzish Taiz Hai Saqi
Dil Har Zarra Mein Ghogha’ay Rasta Khaiz Hai Saqi

دگرگوں ہے جہاں ، تاروں کی گردش تيز ہے ساقی
دل ہر ذرہ ميں غوغائے رستا خيز ہے ساقی

Mataa-e-Deen-o-Danish Lut Gyi Allah Walon Ki
Ye Kis Kafir Ada Ka Ghamzada’ay Khoonraiz Hai Saqi

متاع دين و دانش لٹ گئی اللہ والوں کی
يہ کس کافر ادا کا غمزئہ خوں ريز ہے ساقی

Wohi Daireena Bemari, Wohi Na-Mehkami Dil Ki
Ilaj Iss Ka Wohi Aab-e-Nishaat Anghaiz Hai Saqi

وہی ديرينہ بيماری ، وہی نا محکمی دل کی
علاج اس کا وہی آب نشاط انگيز ہے ساقی

Haram Ke Dil Mein Souz-e-Arzoo Payda Nahin Hota
Ke Paidai Teri Ab Tak Hijab Amaiz Hai Saqi

حرم کے دل ميں سوز آرزو پيدا نہيں ہوتا
کہ پيدائی تری اب تک حجاب آميز ہے ساقی

Na Utha Phir Koi Rumi Ajam Ke Lala-Zaaron Se
Wohi Aab-o-Gill-e-Iran, Wohi Tabraiz Hai Saqi

نہ اٹھا پھر کوئی رومی عجم کے لالہ زاروں سے
وہی آب و گل ايراں ، وہی تبريز ہے ساقی

Nahin Hai Na-Umeed Iqbal Apni Kisht-e-Weeran Se
Zara Nam Ho To Ye Mitti Bohat Zarkhaiz Hai Saqi

نہيں ہے نااميد اقبال اپنی کشت ويراں سے
ذرا نم ہو تو يہ مٹی بہت زرخيز ہے ساقی

Faqeer-e-Rah Ko Bakhshe Ga’ay Asrar-e-Sultani
Baha Meri Nawa Ki Doulat-e-Pervaiz Hai Saqi

فقير راہ کو بخشے گئے اسرار سلطانی
بہا ميری نوا کی دولت پرويز ہے ساقی

 

3 thoughts on “Dirgargoon Hai, Jahan, Taaron Ki Garzish Taiz Hai Saqi – Iqbal

  1. Pingback: blote tieten
  2. Pingback: Exology

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *