La Phir Ek Baar Wohi Bada-o-Jaam Ae Saqi Allama Iqbal Poetry (Bal-e-Jibril)

La Phir Ek Baar Wohi Bada-o-Jaam Ae Saqi – Allama Iqbal Poetry

La Phir Ek Baar Wohi Bada-o-Jaam Ae Saqi

Allama Iqbal Poetry (Bal-e-Jibril)

La Phir Ek Baar Wohi Bada-o-Jaam Ae Saqi
Haath Aa Jaye Mujhe Mera Maqam Ae Saqi

لا پھر اک بار وہی بادہ و جام اے ساقی
ہاتھ آ جائے مجھے ميرا مقام اے ساقی

Teen Sou Saal Se Hain Hind Ke Maikhane Band
Ab Munasib Hai Tera Faiz Ho Aam Ae Saqi

تين سو سال سے ہيں ہند کے ميخانے بند
اب مناسب ہے ترا فيض ہو عام اے ساقی

Meri Meenaye Ghazal Mein Thi Zara Si Baqi
Sheikh Kehta Hai K Hai Ye Bhi Haraam Ae Saqi

مری مينائے غزل ميں تھی ذرا سی باقی
شيخ کہتا ہے کہ ہے يہ بھی حرام اے ساقی

Sher Mardon Se Huwa Baisha-e-Tehqeeq Tehi
Reh Gye Sufi-o-Mullah Ke Ghulam Ae Saqi

شير مردوں سے ہوا بيشۂ تحقيق تہی
رہ گئے صوفی و ملا کے غلام اے ساقی

Ishq Ki Taigh-e-Jigardar Ura Li Kis Ne
Ilm Ke Hath Mein Khali Hai Niyam Ae Saqi

عشق کی تيغ جگردار اڑا لی کس نے
علم کے ہاتھ ميں خالی ہے نيام اے ساقی

Sina Roshan Ho Tou Hai Souz-e-Sukhan Ayn-e-Hayat
Ho Na Roshan, Tou Sukhan Marg-e-Dawam Ae Saqi

سينہ روشن ہو تو ہے سوز سخن عين حيات
ہو نہ روشن ، تو سخن مرگ دوام اے ساقی

Tu Meri Raat Ko Mehtaab Se Mehroom Na Rakh
Tere Paimane Mein Hai Mah-e-Tamam Ae Saqi !

تو مری رات کو مہتاب سے محروم نہ رکھ
ترے پيمانے ميں ہے ماہ تمام اے ساقی

 

 

2 thoughts on “La Phir Ek Baar Wohi Bada-o-Jaam Ae Saqi – Allama Iqbal Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *