Elahi Aqal-e-Khujasta Pe Ko Zara Si Diwangi Sikha De- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | الہي عقل خجستہ پے کو ذرا سي ديوانگي سکھا دے

الہي عقل خجستہ پے کو ذرا سي ديوانگي سکھا دے

Elahi Aqal-e-Khujasta Pe Ko Zara Si Diwangi Sikha De

 

الہي عقل خجستہ پے کو ذرا سي ديوانگي سکھا دے
اسے ہے سودائے بخيہ کاري ، مجھے سر پيرہن نہيں ہے
Elahi Aqal-e-Khujasta Pe Ko Zara Si Diwangi Sikha De
Isse Hai Sodaye Bakhya Kari, Mujhe Sirr-e-Pairhan Nahin Hai
ملا محبت کا سوز مجھ کو تو بولے صبح ازل فرشتے
مثال شمع مزار ہے تو ، تري کوئي انجمن نہيں ہے
Mila Mohabbat Ka Souz Mujh Ko To Bole Subah-e-Azal Farishte
Misal-e-Shama-e-Mazar Hai Tu, Teri Koi Anjuman Nahin Hai
يہاں کہاں ہم نفس ميسر ، يہ ديس نا آشنا ہے اے دل
وہ چيز تو مانگتا ہے مجھ سے کہ زير چرخ کہن نہيں ہے
Yahan Kahan Hum-Nafas Mayyasar, Ye Dais Na-Ashna Hai Ae Dil !
Woh Cheez Tu Mangta Hai Mujh Se Ke Zair-e-Charakh-e-Kuhan Nahin Hai
نرالا سارے جہاں سے اس کو عرب کے معمار نے بنايا
بنا ہمارے حصار ملت کي اتحاد وطن نہيں ہے
Nirala Sare Jahan Se Iss Ko Arab Ke Maamaar Ne Banaya
Bina Humare Hisar-e-Millat Ki Ithaad-e-Watan Nahin Hai
کہاں کا آنا ، کہاں کا جانا ، فريب ہے امتياز عقبي
نمود ہر شے ميں ہے ہماري ، کہيں ہمارا وطن نہيں ہے
Kahan Ka Ana, Kahan Ka Jana, Faraib Hai Imtiaz-e-Uqba
Namood Har Shay Mein Hai Humari, Kahin Humara Watan Nahin Hai
مديرمخزن سے کوئي اقبال جا کے ميرا پيام کہہ دے
جوکام کچھ کر رہي ہيں قوميں ، انھيں مذاق سخن نہيں ہے
Mudeer-e-Makhzan Se Koi Iqbal Ja Ke Mera Payam Keh De
Jo Kaam Kuch Kar Rahi Hain Qoumain, Unhain Mazaq-e-Sukhan Nahin Hai

3 thoughts on “Elahi Aqal-e-Khujasta Pe Ko Zara Si Diwangi Sikha De- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | الہي عقل خجستہ پے کو ذرا سي ديوانگي سکھا دے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *