Zamane Dekhe Ga Jab Mere Dil Se Mehshar Uthe Ga Gutugoo Ka- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا

زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا

Zamane Dekhe Ga Jab Mere Dil Se Mehshar Uthe Ga Gutugoo Ka

زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا
مري خموشي نہيں ہے ، گويا مزار ہے حرف آرزو کا
Zamane Dekhe Ga Jab Mere Dil Se Mehshar Uthe Ga Gutugoo Ka
Meri Khamoshi Nahin Hai, Goya Mazar Hai Harf-e-Arzoo Ka
جو موج دريا لگي يہ کہنے ، سفر سے قائم ہے شان ميري
گہر يہ بولا صدف نشيني ہے مجھ کو سامان آبرو کا
Jo Mouj-e-Darya Lagi Ye Kehne, Safar Se Qayem  Hai Shan Meri
Guhar Ye Bola Sadaf Nasheeni Hai Mujh Ko Saman Aabru Ka
نہ ہو طبيعت ہي جن کي قابل ، وہ تربيت سے نہيں سنورتے
ہوا نہ سرسبز رہ کے پاني ميں عکس سرو کنار جو کا
Na Ho Tabiat Hi Jin Ki Qabil, Woh Tarbiat Se Nahin Sanwarte 
Huwa Na Sar Sabz Reh Ke Pani Mein Aks Saru-e-Kinar-e-Joo Ka
کوئي دل ايسا نظر نہ آيا نہ جس ميں خوابيدہ ہو تمنا
الہي تيرا جہان کيا ہے نگار خانہ ہے آرزو کا
Koi Dil Aesa Nazar Na Aya Na Jis Mein Khawabida Ho Tamanna
Elahi Tera Jahan Kya Hai, Nigar Khana Hai Arzoo Ka
کھلا يہ مر کر کہ زندگي اپني تھي طلسم ہوس سراپا
جسے سمجھتے تھے جسم خاکي ، غبار تھا کوئے آرزو کا
Khula Ye Mer Kar Ke Zindagi Apni Thi Tilism-e-Hawas Sarapa
Jise Samajhte The Jism-e-Khaki, Gubar Tha Kooye Arzoo Ka
اگر کوئي شے نہيں ہے پنہاں تو کيوں سراپا تلاش ہوں ميں
نگہ کو نظارے کي تمنا ہے، دل کو سودا ہے جستجو کا
Agar Koi Shay Nahin Hai Pinhan To Kyun Sarapa Talash Hun Mein
Nigah Ko Nazzare Ki Tamanna Hai, Dil Ko Soda Hai Justujoo Ka
چمن ميں گلچيں سے غنچہ کہتا تھا ، اتنا بيدرد کيوں ہے انساں
تري نگاہوں ميں ہے تبسم شکستہ ہونا مرے سبو کا
Chaman Mein Gulcheen Se Ghuncha Kehta Tha, Itna Bedard Kyun Hai Insan
Teri Nigahon Mein Hai Tabassum Shakista Ho Na Mere Saboo Ka
رياض ہستي کے ذرے ذرے سے ہے محبت کا جلوہ پيدا
حقيقت گل کو تو جو سمجھے تو يہ بھي پيماں ہے رنگ و بو کا
Riyaz-e-Hasti Ke Zarre Zaree Se Hai Mohabbat Ka Jalwa Paida
Haqiqat-e-Gul Ko Tu Jo Samajhe To Ye Bhi Pema Hai Rang-o-Bu Ka
تمام مضموں مرے پرانے ، کلام ميرا خطا سراپا
ہنر کوئي ديکھتا ہے مجھ ميں تو عيب ہے ميرے عيب جو کا
Tamam Mazmoon Mere Parane, Kalam Mera Khata Sarapa
Hunar Koi Dekhta Hai Mujh Mein To Ayb Hai Mere Ayb Joo Ka
سپاس شرط ادب ہے ورنہ کرم ترا ہے ستم سے بڑھ کر
ذرا سا اک دل ديا ہے ، وہ بھي فريب خوردہ ہے آرزو کا
Sapas Shart-e-Adab Hai Warna Karam Tera Hai Sitam Se Barh Kar
Zara Sa Ek Dil Diya Hai, Woh Bhi Faraib Khurda Hai Arzoo Ka
کمال وحدت عياں ہے ايسا کہ نوک نشتر سے تو جو چھيڑے
يقيں ہے مجھ کو گرے رگ گل سے قطرہ انسان کے لہو کا
Kamal-e-Wahdat Ayan Hai Aesa Ke Nauk-e-Nashtar Se Tu Jo Chaire
Yaqeen Hai Mujh Ko Gire Rag-e-Gul Se Qatra Insan Ke Lahoo Ka
گيا ہے تقليد کا زمانہ ، مجاز رخت سفر اٹھائے
ہوئي حقيقت ہي جب نماياں تو کس کو يارا ہے گفتگو کا
Gya Hai Taqleed Ka Zamana, Majaz Rakht-e-Safar Uthaye
Huwi Haqiqat Hi Jab Namayan To Kis Ko Yara Hai Guftugoo Ka
جو گھر سے اقبال دور ہوں ميں ، تو ہوں نہ محزوں عزيز ميرے
مثال گوہر وطن کي فرقت کمال ہے ميري آبرو کا
Jo Ghar Se Iqbal Door Hun Main, To Hun Na Mehzoon Aziz Mere
Misal-e-Gohar Watan Ki Furqat Kamal Hai Meri Abroo Ka

5 thoughts on “Zamane Dekhe Ga Jab Mere Dil Se Mehshar Uthe Ga Gutugoo Ka- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *