Kya Haqiqat Kahun Keh Kya Hai Ishq - Mir Taqi Mir Poetry

Kya Haqiqat Kahun Keh Kya Hai Ishq – Mir Taqi Mir Poetry

Kya Haqiqat Kahun Keh Kya Hai Ishq

کیا حقیقت کہوں کہ کیا ہے عشق

 

Kya Haqiqat Kahun Keh Kya Hai Ishq
Haq-Shanason Ke Han KHUDA Hai Ishq

کیا حقیقت کہوں کہ کیا ہے عشق
حق شناسوں کا ہاں خدا ہے عشق

 

Dil Laga Ho To Ji Jahan Se Utha
Mout Ka Naam Pyar Ka Hai Ishq

دل لگا ہو تو جی جہاں سے اٹھا
موت کا نام پیار کا ہے عشق

 

Aur Tadbir Ko Nahi Kuch Dakhal
Ishq Ke Dard Ki Dawa Hai Ishq

اور تدبیر کو نہیں کچھ دخل
عشق کے درد کی دوا ہے عشق

 

Ishq Se Ja Nahi Koi Khali
Dil Se Le Arsh Tak Bhara Hai Ishq

عشق سے جا نہیں کوئی خالی
دل سے لے عرش تک بھرا ہے عشق

 

Kohkan Kya Pahard KaTega
Parde Mein Zor-Azma Hai Ishq

کوہ کن کیا پہاڑ کاٹے گا
پردے میں زور آزما ہے عشق

 

Ishq Hai Ishq Karne Walon K
Kaisa Kaisa Baham Kiya Hai Ishq

عشق ہے عشق کرنے والوں کو
کیسا کیسا بہم کیا ہے عشق

 

Kon Maqsad Ko Ishq Bin Pahuncha
Aarzu Ishq Muddaa Hai Ishq

کون مقصد کو عشق بنِ پہنچا
آرزو عشق، مدّعا ہے عشق

 

Mir Marna Pare Hai Khuban Par
Ishq Mat Kar Ki Bad Bala Hai Ishq

میر مرنا پڑے ہے خوباں پر
عشق مت کر کہ بد بلا ہے عشق

 

 

Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun – Mir Taqi Mir Poetry

Dil Ki Baat Kahi Nahin Jaati Chup Ke Rahna Thana Hai – Mir Taqi Mir Poetry

One thought on “Kya Haqiqat Kahun Keh Kya Hai Ishq – Mir Taqi Mir Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *