Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun - Mir Taqi Mir Poetry

Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun – Mir Taqi Mir Poetry

Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun

یارو مجھے معاف رکھو میں نشے میں ہوں

 

Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun
Ab Do Tu Jaam Khali Hi Do, Main Nashe Mein Hun

یارو مجھے معاف رکھو میں نشے میں ہوں
اب دو تو جام خالی ہی دو میں نشے میں ہوں

 

Aik Aik Qart-E Dor Main Yunhi Hi Muje Bi Do
Jam-E Sharab Par Na Karo, Main Nashe Mein Hun

ایک ایک قرط دور میں یوں ہی مجھے بھی دو
جام شراب پر نہ کرو میں نشے میں ہوں

 

Masti Se Barhami Hai Meri, Guftagu Ke Bech
Jo Chaho Tum Bi Muj Ko Kahu, Main Nashe Main Hun

مستی سے درہمی ہے مری گفتگو کے بیچ
جو چاہو تم بھی مجھ کو کہو میں نشے میں ہوں

 

Ya Hathon Hath Lo Muje, Manind Jaam-E May
Ya Thori Door Sath Chalo, Main Nashe Main Hun

یا ہاتھوں ہاتھ لو مجھے مانند جام مے
یا تھوڑی دور ساتھ چلو میں نشے میں ہوں

 

Ma’azoor Hun, Jo Paon Mere Be Tarah Pare
Tu Sargaran Tu Muj Se Na Ho, Main Nashe Main Hun

معذور ہوں جو پاؤں مرا بے طرح پڑے
تم سرگراں تو مجھ سے نہ ہو میں نشے میں ہوں

 

Nazak Mazaj Aap Qayamat Hain Mir Ji
Joon Shesha Mere Munh Na Lago, Main Nashe Main Hun

نازک مزاج آپ قیامت ہیں میرؔ جی
جوں شیشہ میرے منہ نہ لگو میں نشے میں ہوں

 

 

Dil Ki Baat Kahi Nahin Jaati Chup Ke Rahna Thana Hai – Mir Taqi Mir Poetry

Aarzuen Hazaar Rakhte Hain – Mir Taqi Mir Poetry

One thought on “Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun – Mir Taqi Mir Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *