Muslim- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | مسلم

Muslim- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | مسلم

مسلم

جون1912ء

Muslim
(June 1912)

 


ہر نفس اقبال تيرا آہ ميں مستور ہے
سينہ سوزاں ترا فرياد سے معمور ہے

Har Nafas Iqbal Tera Aah Mein Mastoor Hai
Seena’ay Sozaan Tera Faryad Se Maamoor Hai

 

نغمہ اميد تيری بربط دل ميں نہيں
ہم سمجھتے ہيں يہ ليلی تيرے محمل ميں نہيں

Naghama’ay Umeed Teri Barbat-e-Dil Mein Nahin
Hum Samajhte Hain Ye Laila Tere Mahmil Mein Nahin

 

گوش آواز سرود رفتہ کا جويا ترا
اور دل ہنگامۂ حاضر سے بے پروا ترا

Gosh Awaz-e-Surood-e-Rafta Ka Joya (Talash) Tera
Aur Dil Hungama’ay Hazir Se Be Parwa Tera


قصہ گل ہم نوايان چمن سنتے نہيں
اہل محفل تيرا پيغام کہن سنتے نہيں

Qissa’ay Gul Hum Nawayan-e-Chaman Sunte Nahin
Ahl-e-Mehfil Tera Pegham-e-Kuhan Sunte Nahin


اے درائے کاروان خفتہ پا! خاموش رہ
ہے بہت ياس آفريں تيری صدا خاموش رہ

Ae Dara’ay Karwan-e-Khufta Pa! Khamosh Reh
Hai Bohat Yaas Afreen Teri Sada Khamosh Reh

 

زندہ پھر وہ محفل ديرينہ ہو سکتی نہيں
شمع سے روشن شب دوشينہ ہوسکتی نہيں

Zinda Phir Woh Mehfil-e-Dairina Ho Sakti Nahin
Shama Se Roshan Shab-e-Dosheena Ho Sakti Nahin

 

ہم نشيں! مسلم ہوں ميں، توحيد کا حامل ہوں ميں
اس صداقت پر ازل سے شاہد عادل ہوں ميں

Hum Nasheen! Muslim Hun Mein, Touheed Ka Hamil Hun Main
Iss Sadaqat Par Azal Se Shahid-e-Adil Hun Main


نبض موجودات ميں پيدا حرارت اس سے ہے
اور مسلم کے تخيل ميں جسارت اس سے ہے

Nabz-e-Moujudat Main Paida Hararat Iss Se Hai
Aur Muslim Ke Takhiyyul Main Jasarat Iss Se Hai


حق نے عالم اس صداقت کے ليے پيدا کيا
اور مجھے اس کی حفاظت کے ليے پيدا کيا

Haq Ne Alam Iss Sadaqat Ke Liye Paida Kiya
Aur Mujhe Is Ski Hifazat Ke Liye Paida Kiya


دہر ميں غارت گر باطل پرستی ميں ہوا
حق تو يہ ہے حافظ ناموس ہستی ميں ہوا

Dehr Mein Gharat Gar-e-Batil Prasti Main Huwa
Haq To Ye Hai Hafiz-e-Namoos-e-Hasti Main Huwa


ميری ہستی پيرہن عريانی عالم کی ہے
ميرے مٹ جانے سے رسوائی بنی آدم کی ہے

Meri Hasti Pairhan Uryani-e-Alam Ki Hai
Mere Mit Jane Se Ruswayi Bani Adam Ki Hai

 

قسمت عالم کا مسلم کوکب تابندہ ہے
جس کی تابانی سے افسون سحر شرمندہ ہے

Qismat-e-Alam Ka Muslim Koukab-e-Tabinda Hai
Jis Ki Tabani Se Afsoon-e-Sehar Sharminda Hai


آشکارا ہيں مری آنکھوں پہ اسرار حيات
کہہ نہيں سکتے مجھے نوميد پيکار حيات

Ashkara Hain Meri Ankhon Pe Asrar-e-Hayat
Keh Nahi Sakte Mujhe Naumeed-e-Paikaar-e-Hayat


کب ڈرا سکتا ہے غم کا عارضی منظر مجھے
ہے بھروسا اپنی ملت کے مقدر پر مجھے

Kab Dra Sakta Hai Gham Ka Arzi Manzar Mujhe
Hai Bharosa Apni Millat Ke Muqaddar Par Mujhe


ياس کے عنصر سے ہے آزاد ميرا روزگار
فتح کامل کی خبر دتيا ہے جوش کارزار

Yaas Ke Unsar Se Hai Azad Mera Rozgaar
Fateh-e-Kamil Ki Khabar Deta Hai Josh-e-Karzaar


ہاں يہ سچ ہے چشم بر عہد کہن رہتا ہوں ميں
اہل محفل سے پرانی داستاں کہتا ہوں ميں

Haan Ye Sach Hai Chashme Bar Ehd-e-Kuhan Rehta Hun Main
Ahl-e-Mehfil Se Purani Dastan Kehta Hun Mein


ياد عہد رفتہ ميری خاک کو اکسير ہے
ميرا ماضی ميرے استقبال کی تفسير ہے

Yad-e-Ehd-e-Rafta Meri Khak Ko Ikseer Hai
Mera Mazi Mere Istaqbal Ki Tafseer Hai


سامنے رکھتا ہوں اس دور نشاط افزا کو ميں
ديکھتا ہوں دوش کے آئينے ميں فردا کو ميں

Samne Rakhta Hun Uss Dour-e-Nishat Afza Ko Main
Dekhta Hun Dosh Ke Aaeene Mein Farda Ko Main

 

 

 

Shama Aur Shayar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | شمع اور شاعر

Gurrah-e-Shawwal Ya Hilal-e-Eid- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | غرۂٔ شوال يا ہلال عيد

Khatab Ba Jawanan-e-Islam- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | خطاب بہ جوانان اسلام

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *