Nanak- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | نانک

نانک

Nanak

 

 

قوم نے پيغام گوتم کی ذرا پروا نہ کی
قدر پہچانی نہ اپنے گوہر يک دانہ کی

Qoum Ne Pegham-e-Gautam Ki Zara Parwa Na Ki
Qadar Na Pehchani Na Apne Gohar-e-Yak Dana Ki

 

آہ! بد قسمت رہے آواز حق سے بے خبر
غافل اپنے پھل کی شيرينی سے ہوتا ہے شجر

Ah! Bad-Qismat Rahe Azwaz-e-Haq Se Be Khabar
Ghafil Apne Phal Ki Sheerini Se Hota Hai Shajar

 

آشکار اس نے کيا جو زندگی کا راز تھا
ہند کو ليکن خيالی فلسفے پر ناز تھا

Ashakara Uss Ne Kiya Jo Zindagi Ka Raaz Tha
Hind Ko Lekin Khayali Falsafe Par Naaz Tha

 

شمع حق سے جو منور ہو يہ وہ محفل نہ تھی
بارش رحمت ہوئی ليکن زميں قابل نہ تھی

Shama-e-Haq Se Jo Munawwar Ho Ye Woh Mehfil Na Thi
Barish-e-Rehmat Huwi Lekin Zameen Qabil Na Thi

 

آہ! شودر کے ليے ہندوستاں غم خانہ ہے
درد انسانی سے اس بستی کا دل بيگانہ ہے

Aah! Shudar Ke Liye Hindustan Ghum Khana Hai
Dard-e-Insani Se Iss Basti Dil Begana Gai

 

برہمن سرشار ہے اب تک مۓ پندار ميں
شمع گو تم جل رہی ہے محفل اغيار ميں

Barhman Sarshar Hai Ab Tak Mai-e-Pindar Mein
Shama-e-Gautam Jal Rahi Hai Mehfil-e-Aghyar Mein

 

بت کدہ پھر بعد مدت کے مگر روشن ہوا
نور ابراہيم سے آزر کا گھر روشن ہوا

Butkada Phir Baad Muddat Ke Magar Roshan Huwa
Noor-e-Ibraheem Se Azar Ka Ghar Roshan Huwa

 

پھر اٹھی آخر صدا توحيد کی پنجاب سے
ہند کو اک مرد کامل نے جگايا خواب سے

Phir Uthi Akhir Sada Touheed Ki Punjab Se
Hind Ko Ek Mard-e-Kamil Ne Jagaya Khawab Se

 

 

 

 

Aik Khat Ke Jawan Mein- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ايک خط کےجواب ميں

Urfi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | عرفی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *