Phoolon Ki Shehzadi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | پھولوں کی شہزادی

پھولوں کی شہزادی

Phoolon Ki Shehzadi

 

 

کلی سے کہہ رہی تھی ايک دن شبنم گلستاں ميں
رہی ميں ايک مدت غنچہ ہائے باغ رضواں ميں

Kali Se Keh Rahi Thi Aik Din Shabnam Gulisan Mein
Rahi Main Aik Muddat Ghuncha Haye Bagh-e-Rizwan Mein

 

تمھارے گلستاں کی کيفيت سرشار ہے ايسی
نگہ فردوس در دامن ہے ميری چشم حيراں ميں

Tumhare Gulistan Ki Kaifiat Sarshar Hai Aesi
Nigah Firdous Dar Daman Hai Meri Chashm-e-Heeran Mein

 

سنا ہے کوئي شہزادی ہے حاکم اس گلستاں کی
کہ جس کے نقش پا سے پھول ہوں پيدا بياباں ميں

Suna Hai Koi Shehzadi Hai Hakim Iss Gulistan Ki
Ke Jis Ke Naqsh-e-Pa Se Phool Hon Paida Byaban Mein

 

کبھی ساتھ اپنے اس کے آستاں تک مجھ کو تو لے چل
چھپا کر اپنے دامن ميں برنگ موج بو لے چل

Kabhi Sath Apne Uss Ke Astan Tak Mujh Ko Tu Le Chal
Chupa Kar Apne Daman Mein Barang-e-Mouj-e-Bu Le Chal

 

کلی بولی، سرير آرا ہماری ہے وہ شہزادی
درخشاں جس کی ٹھوکر سے ہوں پتھر بھی نگيں بن کر

Kali Boli, Sareer Ara Humari Hai Woh Shehzadi
Darkhashan Jis Ki Thoukar Se Hon Pathar  Bhi Nageen Ban Kar

 

مگر فطرت تری افتندہ اور بيگم کی شان اونچی
نہيں ممکن کہ تو پہنچے ہماری ہم نشيں بن کر

Magar Fitrat Teri Uftanda Aur Begam Ki Shan Unchi
Nahin Mumkin Ke Tu Pohenche Humari Hum-Nasheen Ban Kar

 

پہنچ سکتی ہے تو ليکن ہماری شاہزادی تک
کسی دکھ درد کے مارے کا اشک آتشيں بن کر

Pohench Sakti Hai Tu Lekin Humari Shahzadi Tak
Kisi Dukh Dard Ke Mare Ka Ashak-e-Atisheen Ban Kar

 

نظر اس کی پيام عيد ہے اہل محرم کو
بنا ديتی ہے گوہر غم زدوں کے اشک پيہم کو

Nazar Uss Ki Payam-e-Eid Hai Ahl-e-Muhram Ko
Bana Deti Hai Gohar Ghamzadon Ke Ashak-e-Peham Ko

 

 

 

 

Musalman Aur Taleem-e-Jadeed- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | مسلمان اورتعليم جديد

Bilal (R.A.)- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بلال رضی اللہ عنہ

Kufr-o-Islam- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | کفر واسلام

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *