Rone Se Aur Ishq Mein Bebaak Ho Gaye - Mirza Ghalib Poetry

Rone Se Aur Ishq Mein Bebaak Ho Gaye – Mirza Ghalib Poetry

Rone Se Aur Ishq Mein Bebaak Ho Gaye 

رونے سے اور عِشق میں بیباک ہوگئے

Rone Se Aur Ishq Mein Bebaak Ho Gaye 
Dhoye Gaye Hum Itnay Ke Bass Paak Ho Gaye
رونے سے اور عِشق میں بیباک ہوگئے
دھوئے گئے ہم اِتنے، کہ بس پاک ہوگئے
Sarf E Baha E Mai Hoye Alaat E Mai Kashi 
Thay Ye Hi Do Hisaab So Yoon Paak Ho Gaye
صرفِ بہائے مے ہُوئے آلاتِ میکشی
تھے یہ ہی دو حِساب سو یُو ں پاک ہوگئے
Rusva E Dehr Go Hoye Avaargi Se Tum 
Baare Tabiyaton Ke To Chalaak Ho Gaye
رُسوائے دہر گو ہُوئے آوار گی سے تم
بارے طبیعتوں کے تو چالاک ہوگئے
Kehta Hai Kon Nala E Bulbul Ko Be Asar 
Parday Mein Gull Ke Laakh Jigar Chaak Ho Gaye
کہتا ہے کون نالۂ بُلبُل کو بے اثر
پردے میں گُل کے، لاکھ جگر چاک ہوگئے
Poochay Hai Kya Vajood O Adam Ahl E Shauq Ka 
Aap Apni Aag Ke Ḳhash O Ḳhashaak Ho Gaye
پُوچھے ہے کیا وجُود و عدم اہلِ شوق کا
آپ اپنی آگ کے خس و خاشاک ہوگئے
Karne Gaye Thay Us Sy Tagaful Ka Ham Gila 
Ki Aik Hi Nigah Ke Bas Ḳhaak Ho Gaye
کرنے گئے تھے اُس سے تغافل کا ہم گِلہ
کی ایک ہی نِگاہ کہ بس خاک ہوگئے
Is Rang Se Uthai Kal Us Ne Asad Ki Naash 
Dushman Bhi Jis Ko Dekh Ke Gamnaak Ho Gaye
اِس رنگ سے اُٹھائی کل اُس نے اسد کی نعش
دُشمن بھی جس کو دیکھ کے غمناک ہوگئے

26 thoughts on “Rone Se Aur Ishq Mein Bebaak Ho Gaye – Mirza Ghalib Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *